انتخابات 90 دن میں نہیں ہو سکتے، الیکشن کمیشن نے شکوک و شبہات ختم کر دئیے

الیکشن کمیشن آف پاکستان نے نئی حلقہ بندیوں کے شیڈول کا اعلان کرتے ہوئے کہا ہے کہ عام انتخابات 90 روز میں نہیں ہوسکتے۔چیف الیکشن کمشنر سلطان سکندر راجہ کے زیر صدارت الیکشن کمیشن کا اجلاس ہوا، جس میں آئندہ عام انتخابات اور نئی مردم شماری کے بعد کی صورت حال پر تبادلہ خیال کیا گیا،

اجلاس میں انتخابی حلقہ بندیوں کا کام 4 ماہ میں مکمل کرنے کا فیصلہ کیا گیا، جس پر کام آج سے ہی شروع ہو جائے گا۔الیکشن کمیشن کے ترجمان کے مطابق الیکشن کمیشن نے نئی حلقہ بندیاں کرانے کا فیصلہ کیا ہے، جس کے لیے شیڈول کا نوٹیفکیشن بھی جاری کر دیا گیا ہے۔ترجمان کے مطابق نئی حلقہ بندیوں کیلئے صوبائی حکومتوں اور ادارہ شماریات سے معاونت طلب کر لی جبکہ متعلقہ حکام کو نئی حلقہ بندیوں کے حوالے سے احکامات جاری کر دیئے گئے ہیں،

الیکشن کمیشن آف پاکستان کے مطابق حلقہ بندیاں 14 دسمبر کو مکمل ہوں گی جبکہ پرانی حلقہ بندیوں کو منجمد کر دیا گیا ہے۔اعلامیے کے مطابق 21 اگست کو چاروں صوبوں اور اسلام اباد کے لئے کمیٹیاں تشکیل دی جائیں گی، یکم سے 4 ستمبر تک حلقہ بندیوں کمیٹیوں کو ٹریننگ دی جائے گی۔سابق سیکرٹری الیکشن کمیشن کنوردلشاد نے بتایا کہ حلقہ بندیوں کے بعد 15 جنوری تک الیکشن ہو جائیں گے، الیکشن کمیشن نے تمام شکوک و شہبات ختم کر دیئے ہیں۔

کنور دلشاد نے کہا کہ الیکشن کمیشن نے اچھا روڈ میپ دیا ہے، حلقہ بندیوں کا سارا مرحلہ 15 نومبر تک مکمل ہو جائے گا، چیف جسٹس سے الیکشن کمشنر کی ملاقات کے بعد سارے معاملات طے ہوئے ہوں گے۔انہوں نے بتایا کہ حلقہ بندیوں کی ابتدائی اشاعت 9 اکتوبر کو ہو گی، حلقہ بندیوں کے خلاف اپیلیں 10 اکتوبر سے 8 نومبر تک کی جاسکیں گی، الیکشن کمیشن 10 نومبر سے 9 دسمبر تک شکایات پر سماعت کرے گا۔


چیف جسٹس عمرعطا بندیال سے چیف الیکشن کمشنرسکندر سلطان راجا نے ملاقات کی ہے.گزشتہ روزسپریم کورٹ میں ہونے والی اس ملاقات میں عام انتخابات کے معاملے پر بات چیت کی گئی۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ چیف الیکشن اور چیف جسٹس کے مابین خصوصاً عام انتخات نئی حلقہ بندیوں سے کروانے کے مشترکہ مفادات کونسل کا فیصلہ موضوع گفتگو رہا۔

گزشتہ روز عام انتخابات 90 روز میں کرانے اور نئی مردم شماری کے اجراء کی منظوری کا مشترکہ مفادات کونسل کا نوٹیفیکیشن معطل کرانے کے لیے سپریم کورٹ میں آئینی درخواست دائرکی گئی تھی۔صدر سپریم کورٹ بار ایسوسی ایشن کے صدرعابد زبیری کی جانب سے آرٹیکل 184/3 کے تحت دائرکردہ آئینی درخواست میں سپریم کورٹ سے استدعا کی گئی ہے کہ الیکشن کمیشن کو 90 روز میں عام انتخابات کے انعقاد کا حکم دیا جائے۔

Leave feedback about this

  • Rating